چیچہ وطنی: نجی ہسپتال میں غلط انجکشن سے 1 سال کا بچہ جاں بحق

چیچہ وطنی سٹی نیوز: چوہدری عبدالرزاق سے
چیچہ وطنی گرین لینڈ ہوٹل کے قریب نجی ہسپتال میں غلط انجکشن لگانے کی وجہ سے 15 ماہ کا بچہ جاں بحق ، ورثاکی ہسپتال میں توڑ پھوڑ اور شدید احتجاج ، نجی ہسپتال کا تمام عملہ ہسپتال چھوڑ کر فرار. ویڈیو دیکھئے:

تفصیلات کے مطابق چیچہ وطنی کے ایک نجی ہسپتال شاہد رسول چلڈرن کلینک میں کم عمر اور نا تجربہ کار کمپوڈر کے غلط انجکشن لگانے کی وجہ سے 15 ماہ کا بچہ جاں بحق۔
کلینک کا مالک تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال چیچہ وطنی کا موجودہ ایم یس ڈاکٹر شاہد رسول ہے .چیچہ وطنی گلشن حرمت کالونی میں نجی ہسپتال شاہد چلڈرن کلینک میں ایک 15 ماہ کا بچہ عبداللہ، کمپوڈر کے غلط انجکشن لگانے سے زندگی کی بازی ہار گیا۔
معصوم عبداللہ ولد محمد یونس سکنہ بابو ٹاؤن کو ہلکا بخار اور قے آرہی تھی۔
آج اس کو کلینک پر معمول کے مطابق چیک اپ کے لیےلایا گیا. کمپوڈر نے بغیر چیک اپ کیے انجکشن لگا دیا جس سے معصوم عبداللہ کی طبیعت بگڑ گئی اور تھوڑی دیر بعد فوت ہو گیا۔ جس کے بعد ایم ایس شاہد رسول موقع پر آگیا اور بچے کے ورثا سے کہا کہ اس کو فوری طور پر تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال لے جاو اس کو آکسیجن لگواؤ۔
ورثا کے مطابق ہمارا بچہ ہسپتال پہنچنے سے پہلے ہی فوت ہو گیا تھا. پولیس نے لواحقین کے احتجاج پر فوری کارروائی کرتے ہوئے کمپوڈرمحمد یِسین کو پکڑ کر کاروائی شروع کردی۔
جبکہ ڈاکٹر شاہد رسول گریوال ایم ایس ٹی ایچ کیو ہسپتا ل {مالک} نجی کلینک کا موقف ہے کہ اس بچے کو تین دن سے انجکشن لگ رہے تھے آج بھی جب انجکشن لگایا گیا تو بچے کا سانس لمبا ہوگیا ۔ جس کو فوری طرح پر ٹی ایچ کیو ہسپتال لایا گیا۔ جہاں پر بچے کو فوری طور پر آکسیجن فراہم کی گئی۔ مگر بچہ جانبر نہ ہوسکا۔
جب کہ اس وقت ڈاکٹر شاہد رسول گریوال کا حقیقی بھانجا علی بن حسان ایم بی بی ایس ڈیوٹی پر موجود تھا۔
فالو اپ:
چیچہ وطنی: بچے کی ہلاکت پر ڈپٹی کمشنر ساہیوال میاں زمان وٹو کا نوٹس
ڈاکٹر شاہد رسول، ان کے بھانجے اور ڈسپنسر یسین کے خلاف تھانہ سٹی میں مقدمہ درج

اپنا تبصرہ بھیجیں